Sunday , 21 January 2018
Breaking News

Quwat e bardasht


hazrat abu saeed hazrat abu alkhair r.a kay mureedain main say aik shaks hamza sakak nami tha. aur jo apki majlis main hazri bhut kam daita tha. aur hazrat kay darwaishoon per aksar sakhti say paish ata tha. aik din kuch darwaish masjid main aram ker rhay thay. hamza ayay aur darwazay ko baray zor say band kia.tamam darwaish ko is harkat per bhut takleef hui. kuch dair bad hazrat abu al khair r.a bhi khilaf e mamool masjid main tashreef layay.aur tamam darwaishoon nay nehayat iztirab say hamza kay is rawiyay ki shikayat ki kay hamza ham sab ko bara tang kerta hai. aap ko ye harkat napasand maloom hui. shaikh nay hukam dia kay  unko darbar main bulaya jaye. jab wo ayay to hazrat nay farmaya kay hamza darwaishoon ko tum say shikayat hai aur tum un kay aram main khalal daltay ho aur akal say kaam nahi laitay. hamza nay jawab dia kay hazrat jab ye log hamza ka bojh nahi utha sktay to inhain barbardari kay kapray (yani soofioon walay kapray) utar dainay chayie. hazrat us waqt baray achay mizaj main thay.aap nay kaaha hamza phir kaho.unhon nay phir yahi bat ki.ap nay 3 bar pucha aur 3nu bar unhon nay yahi jawab dia.

phir shaikh hazrat abu saeed abu ul khair r.a nay farmaya. jo dosroon ki takleef ka bojh nahi utha sktay unhain mardoon kay kapray utar dainay chayin. farmaya soofioon ka jigar to shair say bhi bara hona chayie


حضرت ابو سعید ابو الخیرؒ کے مریدین میں سے ایک شخص حمزە سکاک نامی تھا جو آپ کی مجالس میں حاضری بہت کم دیتا تھا اور حضرت کے درویشوں پر اکثر درشتی سے پیش آتا تھا، ایک دن کچھ درویش مسجد میں آرام کر رہے تھے۔ حمزە آۓ اور دروازے کو بڑے زور سے بند کیا۔ تمام درویشوں کو اس حرکت پر سخت تکلیف ہوئی۔ کچھ دیر بعد حضرت ابو الخیرؒ بھی خلاف معمول مسجد میں تشریف لاۓ اور تمام درویشوں نے نہایت اضطراب سے حمزە کے اس رویے کی شکایت کی کہ حمزە ہم سب کو بڑا تنگ کرتا ہے ، آپ کو یہ حرکت ناپسند معلوم ہوئی۔
شیخ نے حکم دیا کہ حمزە کو بلاوٴ۔ حمزە اُس وقت بازار جا چُکے تھے،درویشوں نے ان کو دربار میں طلب کیا ۔ 
حضرت نے فرمایا کہ حمزە درویشوں کو تم سے شکایت ہے تم ان کے آرام میں مُخِل ہوتے ہو اور عقل سے کام نہیں لیتے، حمزە نے جواب دیا کہ حضرت جب یہ لوگ حمزە کا بوجھ نہیں اٹھا سکتے تو انہیں باربرداری کے کپڑے (یعنی صوفیوں والے کپڑے) اتار دینا چائیں، حضرت اس وقت بڑے اچھے مزاج میں تھے، آپ نے کہا حمزە پھر کہو!؂ حمزە نے پھر کہا، آپ نے پھر کہا حمزە پھر کہو!؂ حمزە نے تیسری بار کہا

پھر شیخ حضرت ابو سعید ابو الخیرؒ نے فرمایا: جو دوسروں کی تکلیف کا بوجھ نہیں اٹھا سکتے انہیں مردوں کے کپڑے اتار دینے چائیں، فرمایا صوفیوں کا جگر تو شیر سے بھی بڑا ہونا چاہۓ۔

Quwat e bardasht

Check Also

Teach Kids the Best

What do you know about our holy prophit p.b.u.h ?